از مرکز

’’مسجد مبارک‘‘ اسلام آباد کی تقریب افتتاح

امیر المومنین حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز کا ہمسایوں کے حقوق کے بارہ میں نہایت ایمان افروز خطاب

(29؍جون 2019ء۔ نمائندگان الفضل انٹرنیشنل) اللہ تعالیٰ کا بے حد فضل و احسان ہے کہ نئے مرکز احمدیت اسلام آباد، ٹلفورڈ، یوکے میں امیر المومنین حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز کی منتقلی کے بعد ہمارا مرکز حقیقی معنوں میں جنت نظیر بن چکا ہے اور اس کی تزئین و آرائش کا کام مسلسل جاری ہے۔ اسلام آباد کے مختلف مقامات پر نہایت خوبصورت پھول لگائے گئے ہیں اور مختلف جگہوں کو اپنا اپنا منفرد نام دیا گیا ہے جس سے ہر مقام تاریخی اعتبار سے کئی سنہری زاویوں کی طرف نشاندہی کر رہا ہے۔

آج کے تاریخی دن ’’مسجد مبارک‘‘ کی باقاعدہ افتتاحی تقریب کاانعقاد طے پایا تھا جس میں ممبران پارلیمنٹ، سیاسی، سماجی، مذہبی شخصیات کے علاوہ خاص طور پر ہمسایوں کو مدعو کیا گیا۔ مہمانان کی آمد پانچ بجے سے پہلے ہی شروع ہو چکی تھی۔استقبال کے لیے ایک مارکی نصب کی گئی تھی جس میں مہمانوں کا خیر مقدم کیا جاتا اور انہیں تحفہ کے طور پر ایک Gift Pack دیا جاتا جسے ہر مہمان نے شکریہ ادا کرتے ہوئے بڑی خوشی سے قبول کیا۔ اس Gift Pack میں درج ذیل چیزیں شامل تھیں:

1۔اسلام آباد کے تعارف اور نئے مرکز کے حوالہ سے معلوماتی کتابچہ۔
2۔ اسلام آباد میں آنے کے لیے دعوت نامہ
3۔ امن سمپوزیم 2019ء کے خطاب اور تعارف پر مشتمل کتابچہ
4۔جلسہ سالانہ یوکے میں شامل ہونے کے لیے دعوت نامہ
5۔حضور انورایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز کے حالیہ دورۂ امریکہ کے دوران فرمائے جانے والے خطابات کا مجموعہ A Message for Our Time
6۔ 3D مسجد مبارک کی key chain یا 3D میں مسجد مبارک کا Crystal۔

………………

رجسٹریشن کے بعد مہمانوں کو ریفریشمنٹ پیش کی جاتی نیز مارکی میں مختلف نمائشوں کا وزٹ کروایا جاتا۔ نمائشوں کے وزٹ اورپھر اسلام آباد کے tour کے لیے ایک الگ ٹیم مختص تھی۔درج ذیل نمائشیں استقبالیہ مارکی میں لگائی گئی تھیں:

1۔ اسلام آباد کے حوالہ سے تعارفی نمائش
2۔ IAAAEکے کاموں پر مشتمل نمائش جس میں خاص طور پر MITCکا تعارف کروایا گیا۔ MITC مسرور انٹرنیشنل ٹیکنیکل کالج کا مخفف ہے۔ یہ IAAAE کے زیر انتظام افریقن ممالک میں ٹیکنیکل کالجز کےاجرا پر مشتمل ایک پروجیکٹ ہے جس کا مقصد افریقہ میں لوگوں کو بنیادی ٹیکنیکل کام سکھانا ہے تاکہ وہ اپنے پیروں پر کھڑے ہو سکے اور دوسری ضروریات زندگی میں پیش آنے والے ٹیکنیکل کام انجام دے سکیں۔

3۔ قرآن کریم کے مختلف تراجم پر مشتمل نمائش۔
4۔ Humanity First کی نمائش۔
5۔Muslims for Peace(خدام الاحمدیہ)
6۔ Review of Religions
7۔ مختلف معلوماتی بینرز: Poppy Appeal، World Crisis وغیرہ۔

نمائشوں کو دیکھنے کے بعد اسلام آباد کا tourکروایا گیا جس میں خاص طور پر مہمانوں نے مسجد مبارک کو اندر سے دیکھا۔ہر زائر نے مسجد کی خوبصورتی کی تعریف کی اور خاص طور پر مسجد کے اند رونی حصہ میں اللہ تعالیٰ کے ناموں پر مشتمل خطاطی کو دیکھ کر حیرانی کا اظہار کیا۔ نماز ِعصر کا وقت ساڑھے پانچ بجے تھا۔ احبابِ جماعت نے حضورِ انور کی اقتدا میں نماز ادا کی تو مہمان خاموشی سے اس مسحور کن نظارے کو دیکھتے رہے۔ Tour کے بعد مہمانان ملٹی پرپس ہال (Multi Purpose Hall) میں آ گئے جہاں افتتاحی تقریب کا انتظام کیا گیا تھا۔

پروگرام کے لیے 50میزیں لگائی گئی تھیں اور فی میز 9مہمانوں کے بیٹھنے کی جگہ تھی۔

معزز مہمانوں کی ملاقات

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز چھے بجے کے بعد معزز مہمانوں کی ایک مجلس میں تشریف لائے جہاں متعدّد ممبرانِ پارلیمنٹ بشمول ڈومینک گرِیو، ممبرانِ ایوانِ بالا، افواجِ برطانیہ کے سینئر افسران، پولیس کمشنر، مقامی کونسلرز اور دیگر موجود تھے۔

ایک مہمان نے حضورِ انور سے پوچھا کہ آپ کو لندن کے مقابلہ میں یہاں ٹلفورڈ میں رہنا کیسا لگ رہا ہے؟ حضورِ انور نے فرمایا کہ مجھے یہ جگہ پسند آئی ہے۔ یہاں تازہ ہوااور عمدہ ماحول ہے۔ اس سے ملتے جلتے ایک اور سوال کے جواب میں حضورِ انور نے فرمایا کہ اسلام آباد کھلی جگہ ہے اور جماعت کی ضروریات کو بہتر طور پر پورا کر رہا ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ برطانیہ جیسے ترقی یافتہ ملک میں دیہی علاقوں میں بھی ضروریاتِ زندگی پورا کرنے کی عمدہ سہولیات موجود ہیں۔

کرالی (Crawley) کے ممبر آف پارلیمنٹ نےحضورِ انور کو بتایا کہ وہ معاشرے کی بہتری میں جماعتِ احمدیہ کے مثبت کردار کی وجہ سے اس سے بہت متأثر ہیں۔

ایوانِ بالا (ہاؤس آف لارڈز) کے ایک ممبر نے حضورِ انور کی خدمت میں نئے مرکز کی تعمیر پر مبارک باد پیش کی۔ نیز حضورِ انور کی شدّت پسندی کے خاتمہ کے لیے کی جانے والی کاوشوں کو سراہا۔ انہوں نے کہا کہ جماعت احمدیہ اسلام کی حقیقی تصویر پیش کرتی ہے۔

مرٹن کاؤنسل کے ایک کونسلر نے پوچھا کہ آیا اب بھی مسجد بیت الفتوح میں پہلے کی طرح پروگرامز ہوں گے۔ اس پر حضورِ انور نے فرمایا کہ مسجد بیت الفتوح کی اہمیت میں کوئی کمی نہیں ہوئی۔ میں اب بھی کئی خطباتِ جمعہ وہیں پر دیتا ہوں۔ اور وہاں پر پہلے کی طرح بھرپور انداز میں پروگرامزہوتے رہیں گے۔ حضورِ انور نے مسجد بیت الفتوح کی تعمیرِ نَو کی اجازت دینے پر مرٹن کونسل کا شکریہ بھی ادا کیا۔

افتتاحی تقریب کے بعد بھی کچھ مہمانوں نے حضورِ انور سے ملاقات کی سعادت پائی۔ اس ملاقات کے دوران ممبر آف پارلیمنٹ ایڈ ڈیوی (Ed. Davey) نے عرض کیا کہ وہ پورے برطانیہ کے دورے کر رہے ہیں کیونکہ وہ لبرل ڈیموکریٹک پارٹی کے صدارتی امیدوار کی حیثیت میں کھڑے ہو رہے ہیں۔

جواب میں حضورِ انور نے انہیں فرمایا کہ میری دعائیں آپ کے ساتھ ہیں۔ موصوف نے کہا کہ ہمارا ملک بہت ساری چیزوں میں تقسیم ہو رہا ہے۔ حضورِ انور نے فرمایا کہ احمدی مسلمان اپنے ملک کی بہتری، سالمیت اور خوشحالی کے لیے دعا گو ہیں۔ موصوف نے کہا کہ بہت اچھا ہو کہ احمدی بھی پارلیمنٹ کے ممبران بنیں۔ حضورِ انو رنے فرمایا کہ ایک احمدی ایوانِ بالا کے ممبر ہیں۔ ان شاءاللہ مستقبل میں احمدی ایوانِ زیریں کے ممبر بھی بن سکتے ہیں۔
حضورِ انور نے مسجد مبارک کے سٹرکچرل انجینئر، مکینکل انجینئر اور آرکیٹکٹ سے مسجد مبارک کی تعمیر کے بارے میں گفتگو فرمائی اور ان کی خدمات پر ان کا شکریہ ادا کیا۔حضورِ انور نے فرمایا کہ انہیں دنیا بھر سے لوگوں کے خطوط موصو ل ہوئے ہیں جنہوں مسجد مبارک کی تعمیر اور اس کی خوبصورتی کو سراہا ہے۔

افتتاحی تقریب

اس ملاقات کے بعد چھ بج کر 35منٹ پر حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز ملٹی پرپس ہال میں تشریف لائے جو مہمانوں سے پُر ہو چکا تھا ۔اس پروگرام کے لیے میزبانی کے فرائض مکرم فرید احمد صاحب (نیشنل سیکرٹری امور خارجیہ) نے انجام دیے۔ اسٹیج پر لگئے گئے میز پر درج ذیل مہمانوں کو امیر المومنین حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز کے ساتھ بیٹھنے کی سعادت حاصل ہوئی:

Rafiq Ahmad Hayat – National President Ahmadiyya Muslim Community UK
Rt Hon Dominic Grieve QC MP – Member of Parliament for Beaconsfield
Sir Ed Davey MP – Member of Parliament of Kingston and Surbiton
Seema Malhotra MP – Member of Parliament for Feltham and Heston
Sarah Jones MP – Member of Parliament for Croydon Central
Mike Gapes MP – Member of Parliament for Ilford South
Lord Sheikh – House of Lords
Cllr Keith Budden – Chairman of East Hampshire District Council
Cllr David Harmer – Waverly District Council
Cllr David Attfield – Mayor of Farnham
Cllr Stephen Alambritis – Leader of Merton Council
Major General D F Capps CBE – British Army
Rev Neil Fairlamb – Tilford Parish Priest
David Munro – Surrey Police and Crime Commissioner

چھ بج کر 36منٹ پروگرام کا باقاعدہ آغاز تلاوت قرآن کریم سے ہوا۔ قرآن کریم کی تلاوت مکرم محمود احمد وردی صاحب (انڈونیشین ڈیسک) کو کرنے کی سعادت ملی۔ آپ نے سورۃ البقرہ کی آیات 128تا 131کی تلاوت کی۔متلو آیات کا انگریزی ترجمہ مکرم جونتھن بٹرورتھ صاحب کو پڑھنے کا اعزاز حاصل ہوا۔اس کے بعد مکرم رفیق احمد حیات صاحب امیر جماعت احمدیہ یوکے نے تعارفی تقریر کی۔

انہوں نے کہا کہ میرے لیے بڑی سعادت کی بات ہے کہ میں آپ سب کو مسجد مبارک کی افتتاحی تقریب میں خوش آمدید کہہ رہا ہوں جو کہ احمدیہ مسلم جماعت کا نیا مرکز ہے۔ اس جگہ کا نام ‘اسلام آباد’ حضرت خلیفۃ المسیح الرابع رحمہ اللہ علیہ نے عطا فرمایا تھا اور اس کی خرید ستمبر 1984ء میں کی گئی تھی کیونکہ اس وقت جماعت کی ضروریات بڑھتی چلی جا رہی تھیں۔ چوبیس ایکڑ کی زمین کا یہ ٹکڑا پہلے ایک بورڈنگ سکول تھا۔ یہاں پر جلسہ سالانہ بھی باقاعدہ منعقد ہوتاتھا۔ یہاں پہلی دفعہ جلسہ سالانہ 1985ء میں ہوا تھا اور اس کے بعد 2004ء تک یہاں جلسے ہوتے رہے۔ 2004ء کے بعد جب جگہ چھوٹی ہو گئی پھر ہمیں آلٹن میں ایک جگہ ملی۔ اللہ کے فضل و کرم سے یہ جگہ اب مکمل طور پر ڈویلپ ہو چکی ہے اور آج اللہ تعالیٰ کے فضل و کرم سے مسجد مبارک میں پانچ سو لوگ نماز ادا کر سکتے ہیں جبکہ ہال میں مزید بارہ سو کے قریب افراد نماز ادا کر سکتے ہیں۔ یہاں پر تیس رہائشی مکانات اور تین آفس بلاکس ہیں۔

احمدیہ مسلم جماعت کی تمام مساجد معاشرے میں موافقت اور ہم آہنگی پیدا کرنے میں بڑا اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ احمدیہ مسلم جماعت اپنی پوری کوشش کرتی رہتی ہے کہ امن، پیار اور محبت کی فضا معاشرے میں قائم کی جا سکے۔ حضرت مسیح موعود علیہ الصلوٰۃ والسلام کی تعلیمات لوگوں کو پیش کی جاتی ہیں۔ آپؑ وہ امام مہدی ہیں جو ایک خاص مشن کے ساتھ دنیا میں تشریف لائے کہ اسلام کی حقیقی تعلیمات کو پھر سے اجاگر کیا جائے اور انہیں پھر سے دنیا میں قائم کیا جا سکے۔ ہماری جماعت دو سو بارہ ممالک میں پھیل چکی ہے۔ الحمد للہ۔ اور ہمارے لیے بڑی سعادت کی بات ہے کہ حضرت خلیفۃ المسیح الخامس ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز یہاں بنفس نفیس تشریف فرما ہیں اور ہم سے اس موقع پر خطاب فرمائیں گے۔ حضور نے مختلف پارلیمنٹس میں خطاب فرمائے ہیں جن میں کیپٹل ہل یونائیٹڈ سٹیٹس میں اور یورپین پارلیمنٹ بھی شامل ہیں۔ اس کے علاوہ حضور نے دنیا میں امن کے قیام کے لیے مختلف لیڈرز کو بھی اپنا پیغام بھجوایاہے کہ انہیں دنیا میں محبت کی فضا قائم کرنی چاہئے، امن قائم کرنے کی کوشش کرنی چاہئے۔ حضور انورممبران جماعت احمدیہ کو مساجد کے ذریعہ سے امن کو پھیلانے کی ترغیب فرماتے ہیں۔ نیز حضورِ نے قیامِ امن کے لیے حضور نے مختلف تحریکات کی ہیں تا کہ یہ کام بہتر طور پر ہو سکے۔ اور یہی حقیقی اسلام ہے۔

…………………

اس کے بعدRt. Hon. Dominic Grieve QC MP صاحب تشریف لائے اور السلام علیکم کہا۔ انہوں نے کہا کہ بڑی سعادت کی بات ہے کہ ہم یہاں اس تقریب میں شرکت کر رہے ہیں۔ پہلے آپ لندن میں تھے اور اب یہاں ہیں۔ خوشی کی بات یہ ہے کہ آپ کی جماعت کو عالمی نوعیت کا ایک مستقل مرکز مہیا ہو گیا ہے۔ آپ کی اس ملک میں موجودگی ہمارے لیے بھی بڑی خوشی کی بات ہے کیونکہ ہمارے آباؤ اجداد نے بھی ہمیشہ امن، پیار، محبت اور ہم آہنگی کی فضا قائم کرنے کی کوشش کی ہے اور مجھے خوشی ہوتی ہے کہ آپ بھی یہ کام کرنے کی بھرپور کوشش کرتے ہیں۔ ہماری یہ کوشش ہے کہ ہم ہر قسم کی شدت پسندی کو ختم کریں اور ہم جانتے ہیں کہ جس دنیا میں ہم رہتے ہیں اس میں امن کے قیام اور باہمی محبت کی فضا کو قائم کرنے کی بہت ضرورت ہے۔

موصوف نے کہا کہ آپ کا یہاں پر مرکز بنانے کا فیصلہ ہمارے لیے بھی خوش آئند ہے۔ میں جانتا ہوں کہ آپ کے جماعت کے کافی ممبران ایسے ہیں جو دیہی علاقوں میں رہتے ہیں۔ ہماری آبادی کی اکثریت دیہی علاقوں میں ہی آباد ہے۔ اپنے تاثرات کے آخر میں انہوں نے حضورِ انور کا شکریہ ادا کیااور کہا کہ اس تقریب میں شامل ہونا میرے لیے ایک سعادت کی بات ہے۔ میں امید کرتا ہوں کہ یہاں سے انسانیت کی محبت پھیلتی چلی جائے گی ، اس تقریب کے مثبت اثرات ہر جگہ نظر آئیں گے اور آس پاس کے لوگ بھی آپ سے ایک مثبت انداز میں متاثر ہوں گے۔شکریہ

…………………

بعد ازاں اگلے مہمان کونسلر کیتھ بڈن (Keith Budden)صاحب کا تعارف کروایا گیا جو ایسٹ ہمپشئر ڈسٹرکٹ کونسل کے چیئر مین ہیں۔

کونسلر کیتھ بڈن جو اسٹیج پر تشریف رکھتے تھےمنبر پر تشریف لائے اور کہاکہ میرے لیے بڑی خوشی کی بات ہے کہ میں آپ سب کے سامنے یہاں موجود ہوں اور مجھے اس تقریب میں شامل ہونے کا موقع مل رہا ہے۔ یہ مسجد بہت ہی خوبصورت ہے۔ کئی دفعہ ایسا ہوتا ہے کہ مَیں اس مسجد کو دیکھ کر بہت بہت خوشی محسوس کرتا ہوں۔ آپ سب کو بھی اس بات کی مبارک باد کہ آپ نے یہاں پر اتنی اچھی اور خوبصورت مسجد بنائی ہے۔ ایسٹ ہمپشئر میں ہم احمدیہ مسلم جماعت کے ساتھ کافی سالوں سے کام کرتے رہے ہیں اور پھر پچھلے دو سالوں سے walk for peace کے ذریعہ سے نہ صرف لوگ اکٹھے ہوتے ہیں بلکہ اس کے ذریعہ سے بہت سے خدمتِ خلق کے کاموں میں سہولت پیدا ہو جاتی ہے۔ ہم آپ سب کے بہت شکر گزار ہیں کہ آپ ہماری مدد کرتے ہیں۔ پہلے جب میں احمدیہ مسلم جماعت سے متعارف ہوا مجھے ایک چیز جو بہت اچھی لگی وہ یہ تھی کہ آپ لوگوں کا موٹو ‘محبت سب کے لیے نفرت کسی سے نہیں’ یہ بہت ہی طاقت ور موٹو ہے اور میرا خیال ہے کہ یہ بہت ضروری ہے کہ لوگ اس کے اوپر عمل کریں۔ میں آپ سب کو کہوں گا کہ آپ کے ساتھ جو بھی بیٹھا ہوا ہے اپنی زبان میں آپ ایک دوسرے کو خوش آمدید کہیں۔ (اس پر تقریب میں بیٹھے تقریبا تمام شاملین نے ایک دوسرے کو خوش آمدید کہا)۔ پھر موصوف نے کہا کہ ابھی ہم نے اس بات کا مظاہرہ کیا کہ یہ کس قدر ایک ٹھوس پیغام ہے اور کس طرح اس سے انسان کی زندگی بدل سکتی ہے۔

انہوں نے تمام مہمانوں کو ٹلفورڈ میں خوش آمدید کہتے ہوئے اپنے تأثرات کا اختتام کیا۔

…………………

اس کے بعد سٹیج سیکرٹری نے تقریب میں موجود دیگر مہمانوں کا تعارف کروایا جن میں Major General D F Capps CBE – British Army، کونسلر ڈیوڈ ہامر (Cllr. David Harmer) ، بشپ آف گلفورڈ کے نمائندہ، کونسلر ڈیوڈ ایٹ فیلڈ (Cllr. David Attfield)، نیز ممبرز آف پارلیمنٹس میں سیرا جونز (Sarah Jones MP )، محمد اصغر صاحب (ممبر آف ویلش پارلیمنٹ) و دیگر شامل تھے۔

……………

اس کے بعد انہوں نے برطانیہ کی وزیرِ اعظم محترمہ ٹھریزا مَے (Theresa May) کا ارسال کردہ پیغام پڑھ کر سنایا۔

وزیرِ اعظم برطانیہ کا پیغام

مسجد مبارک اور جماعت احمدیہ مسلمہ کے نئے انٹرنیشنل مرکز کی افتتاحی تقریب منانے والے تمام لوگوں کو مجھے اپنی نیک تمناؤں پر مشتمل پیغام بھجوانے پر بہت خوشی محسوس ہو رہی ہے۔

جماعت احمدیہ مسلمہ نے ہمیشہ سے ہی کمیونٹیز کے درمیان امن کو فروغ دینے کے لیے اپنا عزم ظاہر کیا ہے اور جس چیز سے وہ ان کاموں پر محرک ہوتی ہے وہ اُن کے اپنے پیار، شفقت اور رواداری پر مشتمل اقدار ہیں جو در اصل اسلام کی بنیاد ہے۔

جماعت احمدیہ نے ہر مذہب سے تعلق رکھنے والے لوگوں سے یالا مذہب لوگوں سے مکالمات کے ذریعہ کئی دروازے کھولے ہیں ۔اور اس طرح جماعت نے مختلف دوسری کمیونٹیز کو مدد دی ہے کہ وہ بھی اس معاشرے میں اپنے عزم کا اظہار کریں جو اپنی گونا گوئی سے زیادہ مضبوط ہے۔

میں ہر اُس شخص کو خراج تحسین پیش کرنا چاہتی ہوں جس نے اس بات کی یقین دہانی کی کہ یوکے میں اس تاریخی مسجد مبارک اورعالمگیر جماعت احمدیہ کے نئے انٹرنیشنل مرکز کا افتتاح ہو۔مجھے یقین ہے کہ یہ ہمارے ملک کا خوبصورت اثاثہ ہو گا۔افتتاح کے لیے میری نیک تمنائیں آپ کے ساتھ ہیں۔

Theresa May

…………………………

اس کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے ٹھیک 7 بجے نہایت ایمان افروز خطاب فرمایا۔ خطاب کا خلاصہ ہدیۂ قارئین ہے۔

خطاب حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصر العزیز

حضورِ انور ٹھیک 7؍ بجے شام منبر پر رونق افروز ہوئے۔ تشہد، تعوذ اور تسمیہ کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا:

تمام معزز مہمانوں کو السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔ اللہ تعالیٰ کی رحمتیں اور برکتیں آپ سب پر نازل ہوں۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ سب سے پہلے میں اس موقع پر دل کی گہرائیوں سے آپ سب کا پرخلوص شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے آج ہماری دعوت کو قبول کیا اور یہاں تشریف لائے۔ جماعت احمدیہ کی اس علاقے سے وابستگی کو اب قریباً پینتیس برس ہو گئے ہیں جب ہم نے اس خطہ زمین کو خریدا جو شیپ ہیچ لین (Sheephatch Lane)پر واقع ہے اور اس کو اسلام آباد کا نام دیا گیا۔ اس سے پہلے یہاں ایک بورڈنگ سکول تھا جو 1977ء میں بند ہو گیا اور جہاں تک ہمیں علم ہے اس کے بعد یہ رقبہ استعمال میں نہیں تھا۔ یہاں تک کہ جب 1980ء کی دہائی کے وسط میں جماعت نے اسے خرید لیا۔ جہاں پہلے کلاسیں ہوا کرتی تھیں یا طلباء کے بورڈنگ کے کمرے تھے کافی حد تک ان کی شکل یا ہیئت پہلے کی طرح قائم رکھی گئی لیکن بہت معمولی تبدیلیاں بھی کی گئیں تا کہ چھوٹے چھوٹے گھر ان میں تیار کیے جا سکیں جہاں جماعت کے مختلف کارکنوں اور کام کرنے والوں کے لیے رہائش کا انتظام کیا گیا اور یہ احمدی بڑی خوشی کے ساتھ یہاں رہائش پذیر رہے۔ پھر قریبا بیس سال تک ہم یہاں جماعت کے جلسہ ہائے سالانہ منعقد کرتے رہے۔ ان جلسوں کے موقعوں پر دنیا بھر سے ہزاروں کی تعداد میں افراد کا اجتماع ہوا کرتا تھا۔ 2005ء سے جماعت کا جلسہ سالانہ ایک اَور جگہ پر منتقل کیا گیا کیونکہ جلسے کی بڑھتی ہوئی ضروریات کے پیش نظر یہ جگہ بہت چھوٹی پڑ گئی۔ ٹریفک کے اور پارکنگ کے مسائل پیدا ہوئے جن سے یہاں کے مقامی رہائشی متاثر ہوئے اس لیے یہاں مزید جلسے منعقد نہیں کیے گئے۔ چند سالوں سے ہم آلٹن میں جلسہ منعقد کر رہے ہیں۔ ہم مقامی کونسل کا اور مقامی لوگوں کا شکریہ ادا کرتے ہیں کہ اس سلسلہ میں ان کا ہمارے ساتھ بھر پور تعاون رہا ہے۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ بہرحال اس سے پہلے کہ میں مزید کچھ کہوں یہ بات میرے لیے مناسب نہیں ہو گی کہ میں یہاں کے مقامی لوگوں اور کونسل کا شکریہ ادا نہ کروں کہ جنہوں نے اسلام آباد میں اتنے لمبے عرصہ تک ہمارے جلسوں کے انعقاد کی اجازت دی اور پھر تیس احمدی خاندانوں کو یہاں رہنے کی اجازت دی۔ اور اگر اس دور میں مقامی لوگوں کو ہمارے جلسوں یا کسی اَور وجہ سے تکلیف پہنچی ہو تو مَیں اس کے لیے ذاتی طور پر معذرت خواہ ہوں۔ یقیناً ہماری یہ نیت کبھی نہیں تھی کہ ہماری وجہ سے آپ کو کبھی کوئی تکلیف پہنچے کیونکہ ایک حقیقی مسلمان کا یہ فرض ہے کہ وہ اپنے ہمسایوں کا خیال رکھے اور بھرپور کوشش کرے کہ وہ کبھی بھی اپنے ہمسائے کے لیے کسی بھی قسم کی تکلیف کا باعث نہ بنے۔
حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ اب ماضی سے حال کی طرف آتے ہیں۔ میں اپنے دلی شکریہ کے جذبات کا اظہار پھر اپنے ہمسایوں سے کرتا ہوں اور تمام مقامی لوگوں سے کرتا ہوں جو اس علاقے میں رہتے ہیں اور مقامی کونسل کے ممبران کا شکریہ ادا کرتا ہوں جنہوں نے بہت ہی فراخ دلی کا مظاہرہ کیا ہے جس سے ان کی برداشت اور رواداری کا اظہار ہوتا ہے کیونکہ اس کمپلیکس کی تعمیر میں بھی ان کا تعاون اور ان کی اجازت شامل ہے جہاں اللہ تعالیٰ نے ہمیں ایک خوبصورت مسجد کی تعمیر کی توفیق عطا فرمائی ہے اور یہاں تیس خاندانوں کی رہائش کا انتظام فرمایا ہے ۔پھر ایک بڑے ہال کی تعمیر کی توفیق عطا ہوئی ہے اور اگر اس علاقے کے رہائشیوں کو اس ہال کی ضرورت پیش آئے تو جماعت کی طرف سے اس ہال کو ان کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے بھی فراہم کیا جائے گا۔

یہاں پر ہونے والی تعمیرات وہاں کھڑی کی گئی ہیں جہاں پرانی عمارات موجود تھیں اس لیے نئی تعمیرات کا covered یا مسقف حصہ تقریباً اتنا ہی ہے جتنا پہلے تھا لیکن چونکہ اس جگہ کی از سر نو تعمیر کی گئی ہے اس لیے یہ جگہ ہماری جماعت کی ضروریات کو بہت بہتر رنگ میں پورا کرنے والی ہے۔ اس لیے میں مقامی لوگوں کا اور کونسل کا ایک مرتبہ پھر شکریہ ادا کرتا ہوں کہ ان کی طرف سے ہمیں تعاون حاصل رہا۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ گو کہ یہاں جلسہ تو اب منعقد نہیں کیا جاتا لیکن اس مسجد کی چونکہ اس قدر گنجائش ہے کہ نمازیوں کی ایک بڑی تعداد یہاں نماز ادا کرنے کے لیے آیا کرے گی اور خاص طور پر جمعہ کے روز نماز جمعہ کی ادائیگی کے لیے جب لوگ آیا کریں گے تو اس سے یہاں ٹریفک کے بڑھنے کا بہرحال اندیشہ ہے اور وہ لوگ بھی جو یہاں پرروزانہ نماز پڑھنے آئیں گے اس کی وجہ سے یہاں ٹریفک میں بہرحال اضافہ ہو گا اور چونکہ میں اب یہاں رہائش پذیر ہوں اس لیے یہاں کی ٹریفک کی آمد و رفت بڑھنا ایک قدرتی امر ہے۔ روزانہ مجھ سے ملنے کے لیے ، نماز ادا کرنے کے لیے لوگ آتے ہیں اور چونکہ یہاں کی سڑکیں بہت تنگ ہیں اور یک رویہ ٹریک ہے اس لیے ایسے ہو سکتا ہے کہ بعض اوقات یہاں کی ٹریفک پہلے کی نسبت بعض اوقات سست رو ہو۔ اس لیے میں اپنی جماعت کی طرف سے مقامی لوگوں سے کسی تکلیف پر پیشگی معذرت کرتا ہوں لیکن میں آپ کو یہ یقین دلاتا ہوں کہ میں نے اپنی جماعت کے افراد کو اس بات کی نصیحت کی ہے کہ وہ مقامی لوگوں کے حقوق کا ہر وقت خیال رکھیں اور ہمیشہ یہاں گاڑیاں چلانے میں احتیاط برتیں اور قانون کا مکمل طور پر احترام کرتے ہوئے یہاں ڈرائیونگ کریں۔ یقینا آپ اس بات کو بخوبی سمجھتے ہوں گے کہ چونکہ زیادہ لوگ یہاں پر آنے والے ہوں گے اس لیے میں یہ تو نہیں کہہ سکتا کہ کبھی بھی یہاں پر گاڑیوں کی آمد و رفت میں یا سڑکوں میں رکاوٹ پیدا نہیں ہو گی یا ٹریفک یا گاڑیوں کی آمد و رفت سست روی کا شکار نہیں ہو گی لیکن میں آپ سے یہ ضرور کہوں گا کہ ہم ہر ممکن کوشش کریں گے کہ آپ کو یہاں سے گزرتے ہوئے کم سے کم دقت کا سامنا ہو۔ یہ ہمارا مذہبی فریضہ ہے کہ ہم اپنے ہمسایوں کا خیال رکھیں کیونکہ اسلام تواتر کے ساتھ مسلمانوں کو اپنے ہمسایوں کے حقوق ادا کرنے کی تعلیم دیتا ہے اور یہ تعلیم دیتا ہے کہ مسلمانوں کو اپنے ہمسایوں کی ضروریات کا احساس کرنا چاہیے۔ مثلاً قرآن کریم میں سورۃ النساء کی سینتیسویں آیت میں اللہ تعالیٰ مسلمانوں کو ایک انتہائی مؤثر ضابطہ اخلاق عطا فرماتا ہے اور مسلمانوں پر فرض قرار دیتا ہے کہ وہ اپنی زندگیاں اس کے مطابق گزاریں اور مسلمانوں کی اس معاملے میں رہنمائی کرتا ہے کہ کس طرح وہ معاشرے میں دوسروں کے ساتھ سلوک کریں۔ جہاں ایک طرف اس آیت کے مطابق اللہ تعالیٰ کی عبادت کرنے اور کسی چیز کو اس کا شریک نہ ٹھہرانے کا حکم دیا گیا ہے وہیں یہ آیت مسلمانوں کو تمام بنی نوع انسان کے ساتھ محبت اور ہمدردی کے ساتھ پیش آنے کی تعلیم دیتی ہے۔ مثلاً یہ آیت مسلمانوں کو حکم دیتی ہے کہ وہ والدین کے ساتھ احسان اور محبت کا سلوک کریں کیونکہ بطور والدین وہ ایسے لوگ ہیں جنہوں نے ہم سے محبت بالکل بے غرض ہو کر کی ہے اور ہماری بہتری ہی کے لیے بے شمار قربانیاں کی ہیں۔

پھر اس کے بعد مسلمانوں کو قریبی رشتہ داروں اور دوستوں کے ساتھ بھی اور یتیموں سے بھی ہمدردی کی تعلیم دی ہے اور اس کے ساتھ مسکین لوگوں کے ساتھ ہمدردی اور محبت کے ساتھ پیش آنے کی تعلیم دی ہے اور پھر بڑے واضح انداز میں مسلمانوں کو ہمسایوں کے حقوق ادا کرنے کے لیے کہا گیا ہے۔ ایسے ہمسائے جن کے ساتھ ان کی رشتہ داری ہے یا ایسے بھی جن کے ساتھ کوئی تعلق یا قرابت داری نہیں۔ اپنے ہمسایوں کے حقوق ادا کرنے سے یہ مراد ہے کہ مسلمانوں کو چاہیے کہ اپنے ہمسایوں سے بہت محبت اور رواداری کا سلوک کیا جائے اور ہر ممکن کوشش کی جائے کہ کسی وقت بھی جب انہیں ہماری ضرورت پڑے تو ہم ان کی مدد کر سکیں یا کسی غم میں بھی ان کا غم بانٹ سکیں۔ ان کا انتہائی احترام کریں۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ گو پھر اس کے علاوہ اسلام کے مطابق ایک ہمسائے کی تعریف بہت وسیع ہے۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ایک شخص کے ہمسائے صرف وہ نہیں جو آس پڑوس کے گھروں میں رہتے ہیں بلکہ اس میں کم از کم قریب ترین چالیس گھر شامل ہیں۔ پھر اس کے علاوہ قرآن کریم ہمیں تعلیم دیتا ہے کہ انسان کے ہمسائے اس کے کام میں اس کے ہم جلیس بھی ہیں اور وہ لوگ بھی جو ان کے ساتھ کسی سفر میں شامل سفر ہوتے ہیں۔ اس کی روشنی میں ہم ان تمام لوگوں کو اپنا ہمسایہ سمجھتے ہیں جو اس علاقے میں رہتے ہیں یا ان سڑکوں پر گاڑیاں چلاتے ہیں۔ اس لیے تمام احمدیوں پر یہ فرض ہے خواہ وہ اسلام آباد کے رہائشی ہیں یا مقامی علاقوں میں رہتے ہیں یا کہیں دور سے یہاں نمازیں ادا کرنے کے لیے آتے ہیں وہ ہر موقعے پر قوانین کا احترام کریں اور ہمارے ہمسایوں کے اس وسیع دائرے کا احترام کریں ان کا خیال رکھیں اور پوری کوشش کریں کہ انہیں کسی قسم کی تکلیف یا پریشانی ہماری وجہ سے نہ ہو۔
حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ میں ذاتی طور پر آپ سے وعدہ کرتا ہوں کہ میں آپ کے حقوق کا بھر پور احترام کروں گا آپ کا پورا خیال رکھوں گا اور مسلسل میں اپنی جماعت کے افراد کو بھی ایسا کرنے کی تعلیم دیتا رہوں گا۔ ہم پر اللہ تعالیٰ کا یہ انتہائی احسان ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ہمیں اس مسجد کو تعمیر کرنے کی توفیق عطا فرمائی جہاں ہم اکٹھے ہو کر ایک خدا کی عبادت کر سکیں ۔ ہمارا یہ عقیدہ ہےکہ اس مسجد کا افتتاح ہم پر یہ فرض عائد کرتا ہے کہ ہم بنی نوع انسان کے حقوق پہلے سے بڑھ کر ادا کریں۔ یہ ہمارا کامل ایمان ہے کہ ہم اس وقت ہی اس مسجد کے قیام کے مقاصد کو انصاف کے ساتھ پورا کر سکتے ہیں اور اللہ تعالیٰ کے حقوق ادا کر سکتے ہیں اگر ہم حقوق العباد کو ادا کرنے والے ہوں گے۔ یقیناً ہمارا مذہب ہم سے یہ تقاضا کرتا ہے کہ ہم ان بہترین اخلاق کا مظاہرہ کریں جو اسلام نے ہمیں عطا کیے ہیں۔ پھر قرآن کریم میں سورۃ البقرہ کی چوراسیویں آیت میں اللہ تعالیٰ ہمیں تعلیم دیتا ہے کہ اپنے دلوں کو دوسروں کے لیے کشادہ کرو اور دوسروں کی ضروریات کے لیے اپنے دلوں میں ہمدردی پیدا کرو۔ اگر ایک احمدی مسلمان کا معیار اس معیار سے نیچے ہو گا تو ایسا شخص مرد یا عورت اپنے دین کے تقاضوں کو پورا کرنے والے نہیں ہوں گے۔ پھر اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو یہ حکم دیا ہے کہ یہ کافی نہیں کہ وہ صرف اللہ تعالیٰ ہی کی عبادت ایک مسجد میں کریں بلکہ ان کا یہ فرض ہے کہ مقامی لوگوں، ہمسایوں اور دوسرے آس پاس کے لوگوں کے حقوق بھی ادا کرنے والے ہوں اور ضرورت مندوں کی حاجت روائی کرنے والے ہوں بلکہ اللہ تعالیٰ تو یہ تعلیم دیتا ہے کہ جو بنی نوع انسان کے حقوق پورے نہیں کرتے ان کی نمازیں کبھی قبول نہیں کی جائیں گی بلکہ ردّ کردی جائیں گی۔ سو مختصراً یہ کہا جا سکتا ہے کہ اس مسجد میں خدا تعالیٰ کی عبادت کرنے کے ساتھ ساتھ ہمارا یہ بھی مذہبی فریضہ ہے اور ہماری عبادت کا ایک اہم جزو ہے کہ ہم مقامی کمیونٹی کے بھی حقوق ادا کریں اور اللہ تعالیٰ کی مخلوق کے حقوق ادا کریں۔ اسی لیے جہاں کہیں بھی جماعت احمدیہ مسجد کا افتتاح کرتی ہے یا مسجد تعمیر کی جاتی ہے تو ہم کوشش کرتے ہیں کہ بالخصوص مقامی لوگوں کے حقوق اور بالعموم تمام معاشرے کے حقوق کی ادائیگی میں پہلے سے بڑھ کر کوشش کی جاتی ہے۔ اور آپ جانتے ہوں گے کہ ہماری جماعت تمام دنیا میں مختلف جگہوں پر بنی نوع انسان کی خدمت کے لیے رفاہی کاموں میں پیش پیش ہے خاص طور پر ان علاقوں میں ہم خدمت کر رہے ہیں جو دور دراز ہیں اور غربت کا اور مفلسی کا شکار ہیں۔ ہم ہر ممکن کوشش کرتے ہیں کہ بھوکوں کو کھانا کھلائیں اور کمزوروں اور ناداروں کی دادرسی کریں اور ان کی مشکلات کو دور کریں۔ جہاں کہیں بھی ممکن ہوتا ہے ہم کوشش کرتے ہیں کہ ان لوگوں تک مفت علاج کی سہولت پہنچائیں جو بنیادی علاج کی سہولت سے بھی محروم ہیں۔ پھر ہم نے اس مقصد کے حصول کے لیے کئی ہسپتال قائم کیے ہیں ، میڈیکل کیمپ لگائے جاتے ہیں اور کئی کلینک افریقہ میں کام کر رہے ہیں۔ یہ علاقے جہاں یہ خدمت کی جارہی ہے دنیا کے غریب ترین اور انتہائی پسماندہ علاقے ہیں۔ ہم نے پرائمری اور سیکنڈری سکول دنیا کے غیر ترقی یافتہ ممالک میں کھولے ہوئے ہیں تا کہ وہاں کے بچوں کو بھی علم کی نعمت میسر ہو۔ مزید برآں انہیں مختلف قسم کے پیشہ وارانہ ہنر سکھائے جاتے ہیں تاکہ ایسا علم اور ہنر انہیں میسر ہو جو انہیں مفلسی، غربت اور ناانصافی کے چنگل سے آزاد کر دے۔جس میں یہ لوگ کئی نسلوں سے پڑے ہوئے ہیں۔ پھر اس کے علاوہ ہماری جماعت کے انجنیئرز باقاعدگی کے ساتھ رضاکارانہ طور پر دور دور کے سفر اختیار کرتے ہیں تا کہ پانی کے پمپ اور کنوئیں لگائیں اور دور دراز کے پسماندہ علاقوں میں بسنے والے لوگوں تک پانی کی سہولت پہنچ سکے۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ میں بھی ذاتی طور پر افریقہ میں رہا ہوں اور میں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے کہ اس خطے میں کس قدر غربت ہے اور لوگ کس قدر محرومی کا شکار ہیں۔ میں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے کہ وہ بچے جن کی عمر سکول جانے کی ہے وہ کئی کئی میل روزانہ پیدل چلتے ہیں اور پانی مہیا کر کے اپنے خاندانوں کی ضرورت پوری کرتے ہیں۔ ان میں سے بعض ایسے ہیں جو سکول اس لیے نہیں جا سکتے کیونکہ ان کی ذمہ داری بہت سخت ہے کہ انہیں اپنے خاندان کا خیال رکھنا ہے اور اس وجہ سے وہ تعلیم کی نعمت سے محروم ہیں۔ پھر دوسرے ایسے بچے ہیں جو سکول تو جاتے ہیں مگر سکول کے اوقات کے بعد نہایت صبر آزما اور شدید سفر اختیار کرتے ہیں۔ اس انتہائی غربت اور ناامیدی میں مبتلا لوگوں کے گھروں کے قریب جب کنوئیں یا پمپ لگائے جاتے ہیں جن کے ذریعہ انہیں پینے اور گھر کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے صاف پانی مہیا ہوتا ہے آپ اندازہ نہیں کر سکتے کہ ان کے ان بچوں کے چہروں پر خوشی کے کیا تاثرات ہوتے ہیں۔ ان کے چہرے کی طمانیت اور اس مسرت اور خوشی کا اندازہ نہیں لگا یا جا سکتا جب وہ پانی کو پہلی مرتبہ اپنی دہلیز کے سامنے مہیا پاتے ہیں۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ میں اس بات کو واضح کرنا چاہتا ہوں کہ بنی نوع انسان کی فلاح و بہبود اور رفاہ عامہ کے کاموں کے سلسلہ میں کسی قسم کی تفریق نہیں کی جاتی۔ اس سلسلہ میں مذہب یا عقیدے سے قطع نظر ہر ضرورت مند کی مدد کی جاتی ہے۔ اس بات سےکوئی فرق نہیں پڑتا کہ کوئی شخص عیسائی ہے، ہندو ہے، سکھ ہے یا لادین ہے یا اس کا کسی اور مذہب سے تعلق ہے۔ ہمارا واحد مطمح نظر یہی ہے کہ ہم ہر معصوم اور محروم کو اس کی تکلیف سے نجات دلا سکیں تاکہ وہ بھی باوقار زندگیاں گزار سکیں۔ اس لیے جہاں کہیں بھی ہم کسی مسجد یا مرکز کو قائم کرتے ہیں تو اس بات سے قطع نظر کہ ضرورت مند کون ہے ہماری سوچیں اور توجہات اس ذمہ داری کی طرف اَور بھی زیادہ مرکوز ہو جاتی ہیں۔ اگر ہم دیکھیں کہ کوئی بھی شخص کسی قسم کی مشکل کا شکار ہے تو ہمارا فرض ہے کہ ہم اس مشکل کو دور کرنے کی حتی المقدور کوشش کریں۔ مثلاً قرآن کریم کی سورہ توبہ میں اللہ تعالیٰ مسلمانوں کو یہ حکم دیتا ہے کہ وہ ان تمام لوگوں کی گردنیں آزاد کریں جو غلامی کی زنجیروں میں جکڑے ہوئے ہیں۔ یہ سورت مسلمانوں کو تعلیم دیتی ہے کہ وہ بھوکوں کو کھانا کھلائیں اور کمزور اور مغلوب طبقوں کی داد رسی کریں جس میں یتیم اور مریض بھی شامل ہیں۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ قرآن کریم یہ بھی تعلیم دیتا ہے کہ جو دوسروں کے لیے ہمدردی نہیں رکھتے وہ تقویٰ سے دور ہو جاتے ہیں۔ انہیں اندھیر ااور ظلمت کے اس رستے پے لے جایا جاتا ہے جو اللہ تعالیٰ کی پناہ سے دور لے جانے والا ہے۔ اس لیے ہمارا یہ مشن ہے کہ ہم بنی نوع انسان کی خدمت کریں اور جب یہاں ہم نے مسجد تعمیر کی ہے اور سرے (Surrey) میں اپنا مرکز قائم کیا ہے ہمارا یہ بھی مقصد ہے کہ ہم اس ضمن میں اپنی کوششوں کو مزید بڑھائیں تا کہ ہم بنی نوع انسان کی ضرورتیں پوری کر سکیں۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ ہماری انسانیت کے لیے خدمت کی کوششیں صرف غیر ترقی یافتہ ممالک میں نہیں بلکہ ہم اپنے مقامی معاشرے کی بہتری کے لیے بھی کام کرتے ہیں۔ مثلاً یہاں برطانیہ میں ہماری جماعت نے مختلف پراجیکٹ شروع کیے ہوئے ہیں جن کے ذریعہ یہاں کے شہریوں کی بھی مشکلات دور کی جا رہی ہیں۔ ہم مسلسل ایسے فنڈ ریزنگ کے یا عطیات جمع کرنے کے پروگرام کرتے رہتے ہیں اور پھر ان کے ذریعہ موصول ہونے والی رقوم کے ذریعہ برطانوی چیریٹی اداروں کی مدد کی جاتی ہے۔ جہاں تو ہم براہ راست لوگوں کی مدد کر سکتے ہیں وہاں ہم کرتے ہیں اور اگر ایسے علاقے ہوں جہاں تک ہماری رسائی نہیں تو پھر ہم ایسے بعض چیریٹی اداروں یا رفاہی اداروں کے ساتھ مل کر ان علاقوں تک پہنچتے ہیں۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ ہم اس کے بدلے میں کوئی تعریف یا ستائش نہیں چاہتے اور نہ ہی ہم اپنی خدمت کا دائرہ چند مخصوص افراد یا مخصوص قوم و مذہب کے لوگوں تک محدود رکھتے ہیں اس لیے یہ واضح ہو کہ بنی نوع انسان کے لیے ہماری خدمت رنگ و نسل اور مذہب کے امتیاز سے بالا تر ہے۔ یہی ہمارا مشن ہے، یہی ہماری پہچان ہے اور یہی اسلام ہے۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے فرمایا کہ اپنی تقریر کے آخر میں ایسے لوگوں کے لیے جن کو جماعت کے ساتھ پوری طرح سے ابھی تعارف حاصل نہیں میں بتاتا ہوں کہ جماعت احمدیہ کو آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی کے مطابق اللہ تعالیٰ نے ایک سو تیس برس قبل قائم فرمایا۔ یہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی پیشگوئی تھی کہ چودہ سو سال کے بعد مسیح موعود اور امام مہدی کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے بھیجا جائے گا اور یہ بعثت آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی امت میں سے ہو گی تا کہ اسلام کی حقیقی تعلیمات کو دوبارہ سے اجاگر کیا جائے۔ ہم احمدی مسلمان یہ عقیدہ رکھتے ہیں کہ ہماری جماعت کے بانی کو اللہ تعالیٰ نے اسی پیشگوئی کے مصداق کے طور پر مبعوث فرمایا جنہوں نے جماعت کی بنیاد 1889ء میں ہندوستان کے ایک دور دراز گاؤں میں رکھی اور اب اللہ تعالیٰ کے فضل سے جماعت احمدیہ مسلمہ دنیا کے دو سو بارہ ممالک میں پھیل چکی ہے۔ جہاں کہیں بھی ہماری جماعت کے افراد موجود ہیں اور جہاں وہ حقوق اللہ کی ادائیگی اللہ تعالیٰ کی عبادت کے ذریعہ کرتے ہیں اور اس کام کے لیے مساجد تعمیر کرتے ہیں وہ اس بات کو اپنے دین کا لازمی جزو سمجھتے ہیں کہ بنی نوع انسان کی بھی خدمت کریں۔ جب سے ہم نے اسلام آباد کی زمین خریدی ہےیہاں بھی ایسا ہی رہا ہے۔ جب سے ہم یہاں آئے ہیں ہم نے یہاں کے مقامی معاشرے میں اپنے آپ کو جذب کیا ہے اور اس کا یہ ثبوت ہے کہ آپ میں سے کئی ہمارے پرانے دوست بھی ہیں اور یہ بھی کہ دو احمدی مسلمان جو اسلام آباد کے رہائشی ہیں ویورلی (Waverley)کونسل کے ممبر بھی ہیں۔ ہمیں مقامی معاشرے سے الگ تھلگ رہنے میں کوئی دلچسپی نہیں بلکہ ہم تو چاہتے ہیں کہ ہم اپنے آپ کو معاشرے میں جذب کریں اور ذمہ دار شہری ہونے کی حیثیت سے مقامی معاشرے کی خدمت کریں اور اس کے لیے مفید ثابت ہوں۔ یقیناً میری نظر میں حقیقی انٹگریشن (integration)یا معاشرے میں جذب کرنے کی تعریف یہی ہے کہ اپنے اس ملک کے ساتھ مکمل وفادار ہوا جائے جہاں انسان کی سکونت ہے۔ ملک کے قوانین کی پاسداری کی جائے۔ مقامی کمیونٹی کی خدمت کی جائے اور جو کوئی بھی ہنر یا استعدادیں انسان کو ودیعت ہیں وہ اپنی قوم کی فلاح و بہبود کے لیے استعمال کی جائیں۔

حضورِ انور ایّدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے اپنے خطاب کے آخر میں فرمایا کہ آخر میں ایک مرتبہ پھر اس بات پر میں اپنے شکریہ کے جذبات کے اظہار کے لیے کہ اس جگہ کی تعمیرِ نَو کا ہمیں موقع ملا ہے جو ہماری جماعت کا مرکز ہے میں کہتا ہوں کہ تمام احمدی مسلمان جو یہاں رہتے ہیں یا آس پاس کے رہائشی ہیں آپ کا خیال رکھنے اور آپ کے حقوق پورے کرنے میں پہلے سے بڑھ کر کوشش کرنے والے ہوں گے۔ مجھے یقین ہے کہ آپ دیکھیں گے کہ یہ مسجد اور یہ مرکز امن و سلامتی اور خدمت انسانیت کا ایک عظیم الشان نشان بن کر ابھرے گا۔ اور ایک روشنی کا ایسا مینار ثابت ہو گا جس کی روشنی آسمان کو چھوئے گی اور جس کی بنیاد باہمی محبت ، رواداری اور ہمدردی پر ہو گی۔

ان الفاظ کے ساتھ ایک مرتبہ پھر میں آپ سب کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ آپ اس پرمسرت موقع پر ہمارے ساتھ شامل ہوئے۔ اللہ تعالیٰ آپ کو جزائے خیر دے۔ بہت بہت شکریہ

…………………

سات بج کر 27 منٹ پر خطاب کا اختتام ہوا۔ اس کے بعد حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز نے دعا کروائی۔ بعد ازاں عشائیہ پیش کیا گیا۔

………………

اس پروگرام میں 500 سے زائدافراد نے شرکت کی۔ 300سے زائد ہمسائے اور خصوصی مہمانان تھےجن میں 5سیاستدان، فوج کے ایک میجر جنرل اور فوج کے متعدد نمائندے، سَرے پولیس اور کرائم کمشنر نیز پولیس کے متعدد نمائندے، 4 کونسل لیڈر (East Hampshire, Runnymede, Farnham Town, Merton Councils)، چار Mayors اور دو Deputy Mayors، مختلف علاقوں کے 24 کونسلر، 15 مختلف مذہبی اداروں کے نمائندےشامل ہوئے جن میں مقامی چرچ کے نمائندے بھی شامل ہیں۔

اس موقع کے لیے ایک خصوصی ویب سائٹ بھی www.MubarakMosque.org بھی معلومات حاصل کرنے کے لیے موجود ہے۔

میڈیا کوریج اور مہمانوں کے تأثرات انشاء اللہ اگلے شمارے میں شامل کئے جائیں گے۔

……………(باقی آئندہ)

مزید دیکھیں

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button