متفرق شعراء

ہدیۂ نعت بحضور سرورِ دو عالمﷺ

(’م م محمود‘)

بے مثال و یکتا و خوب رُو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

نہیں کوئی اُن سا حسین خُو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

ہے محیط فیضِ محمدیؐ از آفرینش تا ابد

سرِ شرق و غرب چہار سُو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

درِ مصطفیٰؐ ہی کھلا ہے اِک، اسی ایک در سے ہر اِک نبی

گزرا کہ گزرے جب کبھو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

وہ سرشتِ نرم خو جاں فزا، ہوئے جس پہ عاشق و جاں فشاں

سبھی جان لیوا تھے جو عدو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

نہ ملا قدح کوئی آپؐ سا اے ساقیٔ کوثر کہیں

ڈھونڈے بہت جام و سبو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

رخِ آنحضورؐ کے رُو برو پڑیں ماند سب ہی، اگرچہ ہوں

روئے مہر و ماہ بھی دُو بدو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

ہے بہر زمان و ہر اِک مکاں بحرِ عطا نبیؐ کریم

سدا جاری بہرِ ہر کسو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

ہیں منوّر از نورِ خدا وہ سر بسر اور متّصف

بصفاتِ باری مو بمو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

سنوں جب حلاوتِ گفتگو مَیں حضورِ پاکؐ کی، یوں لگے

بہے صاف و خوش مزہ آبِ جو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

وہی رہنمائے تمام ہیں وہی بالیقیں، سبھی ماسوا

ہیں ادھورے ناقص و گومگو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

پڑھیں سب درود و سلام ہیں بعد از وضو، پہ حضورؐ کا

میں ہوں نام لینے سے با وضو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

دل و جاں سے آپؐ فدا تھے خلق پہ، کاش آپؐ پہ ہو فدا

مری جان و جسم مرا لہو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

ازراہِ شفقت شافعی کر دیں شفاعت جب مروں

جیوں لے کے بس یہی آرزو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

گو لکھی ہے مدح مگر ہے حسرتِ دل، ہیں جیسے حسین آپؐ

کہوں ویسی نعت میں ہو بہو صَلُّوْا عَلَیْہِ و سَلِّمُوْا

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close