سیرت حضرت مسیح موعود علیہ السلام

احمد علیہ السلام۔ سیرت و سوانح

(’اے ولیم‘)

منارکے نقشہ کی بابت ایک روایت بہت اہم ہے جس سے معلوم ہوتاہے کہ اس منارکابنیادی نقشہ اور ڈیزائن خدائی القاء واشارہ کے تحت تھا۔

اشتہار چندۂ مَنَارۃ المسیح (حصہ چہارم)

(گزشتہ سے پیوستہ)حضرت عرفانی صاحبؓ14؍ فروری 1917ء کے الحکم میں لکھتے ہیں :

’’انہیں ایام میں آپ کے دل میں ڈالا گیا کہ منارۃ المسیح تعمیرکیاجاوے اسکے لئے پہلے مختلف جگہیں پیش ہوتی رہیں۔ حضرت مولانا حکیم الامت خلیفۃ المسیح الاولؓ نے اپنا مکان پیش کیاتھا کہ اس میں بنایاجاوے لیکن حضرت کی خواہش یہ تھی کہ مسجد میں بنایا جاوے مگرمسجدکااحاطہ اس وقت بہت ہی چھوٹا تھاحضرت مرزا غلام مرتضیٰ صاحب مرحوم کے مزارکے بالکل قریب اس کے احاطہ کی دیوارتھی باقی حصہ اگرچہ مسجدہی کا تھا مگرغیرآبادپڑے رہنےکے باعث وہ عام لوگوں کاگزرگاہ سابناہواتھاجب حضرت نے ارادہ فرمایاتواس حصہ کواحاطہ مسجدمیں شامل کرنے کاارادہ فرمایابعض ہندوؤں نے جوہمیشہ سے مخالفت کے عادی تھے مخالفت کی لیکن آخرتائیدالٰہی نے انہیں خجل اور شرمندہ کیاوہ زمین مسجدکے ساتھ ملحق ہوگئی ۔‘‘

(الحکم 14فروری 1918ء نمبر 2جلد 20 صفحہ11-12)

حضرت میرحامدشاہ صاحب ؓ کے چھوٹے بھائی حضرت سیدعبدالرشیدصاحب نے اس مینارکی ڈیزائننگ اور اخراجات کااندازہ وغیرہ لگایاجوکہ دس ہزارروپے کاتھا۔

منارکے نقشہ کی بابت ایک روایت بہت اہم ہے جس سے معلوم ہوتاہے کہ اس منارکابنیادی نقشہ اور ڈیزائن خدائی القاء واشارہ کے تحت تھا۔جیساکہ عزیز دین صاحب بواسطہ عیدا صاحب گمہارسکنہ موضع کنڈیلا بیان کرتے ہیں کہ (مسجد اقصٰے میں نمازِ عید ادا کرنے کے بعد ) حضور ؑ نے اُٹھ کر کاغذ پر نقشہ منار کھینچا اور فرمایا کہ’’ مجھے خدا نے فرمایا ہے کہ اِس قِسم کا مینار تم تیار کراؤ۔‘‘

(رجسٹر روایاتِ صحابہؓ(غیر مطبوعہ)رجسٹر نمبر 7 صفحہ 345 روایت عزیز الدین صاحب ولد بھاگ صاحب)

جب حضورعلیہ الصلوٰۃ والسلام نے یہ اشتہارشائع فرمایا تو وفاشعار جاں نثاروں نے اخلاص ووفاکے عجیب نمونے دکھائے ۔حضرت ام المؤمنین ؓ نے دہلی میں موجوداپنے ایک مکان کوفروخت کرنے کاعزم کرتے ہوئے ایک ہزارروپے کاوعدہ لکھوایا ۔سیالکوٹ کے ایک غریب لکڑی فروش نے تواپنے خلوص نیت کا ایسا قابل رشک مظاہرہ کیا کہ خداکے فرستادے نے انہیں ابوبکرؓ کے نمونے کامصداق قراردیا۔ایک اوردوست نے بھی حیرت انگیزقربانی کامظاہرہ کرتے ہوئے چندہ پیش خدمت کیاتوحضورؑ نے ان کی مالی قربانی کوقابل رشک قرار دیتے ہوئے دوسروں کے لئے بطورنظیران کاذکرکرتے ہوئے فرمایا:

’’ نظیرکے طورپربیان کرتاہوں کہ ان دنوں میں میری جماعت میں سے دوایسے مخلص آدمیوں نے اس کام کے لئے چندہ دیاہے جوباقی دوستوں کے لئے درحقیقت جائے رشک ہیں۔ایک ان میں سے منشی عبدالعزیزنام ضلع گورداسپورمیں پٹواری ہیں جنہوں نے باوجوداپنی کم سرمائیگی کے ایک سوروپیہ اس کے کام کے لئے چندہ دیاہے ۔ اورمیں خیال کرتاہوں کہ یہ سو روپیہ کئی سال کاان کااندوختہ ہوگا۔اورزیادہ وہ قابل تعریف اس سے بھی ہیں کہ ابھی وہ ایک کام میں سوروپیہ چندہ دے چکے ہیں اوراب اپنے عیال کی بھی چنداں پروا نہ رکھ کریہ چندہ پیش کردیا۔جزاہم اللہ خیرالجزاء۔ دوسرے مخلص جنہوں نے اس وقت بڑی مردانگی دکھلائی ہے میاں شادی خان لکڑی فروش ساکن سیالکوٹ ہیں ۔ابھی وہ ایک کام میں ڈیڑھ سو روپیہ چندہ دے چکے ہیں۔ اوراب اس کام کے لئے دوسو روپیہ چندہ بھیج دیاہے۔اوریہ وہ متوکل شخص ہے کہ اگراس کے گھرکاتمام اسباب دیکھاجائے تو شایدتمام جائدادپچاس روپیہ سے زیادہ نہ ہو۔ انہوں نے اپنے خط میں لکھاہے کہ’’چونکہ ایام قحط ہیں اور دنیوی تجارت میں صاف تباہی نظرآتی ہے توبہترہے کہ ہم دینی تجارت کرلیں ۔اس لئے جوکچھ اپنے پاس تھا سب بھیج دیا۔اوردرحقیقت وہ کام کیا جوحضرت ابوبکررضی اللہ عنہ نے کیا تھا۔‘‘

(مجموعہ اشتہارات جلدسوم صفحہ314-315)

لیکن مجموعی طورپرچندے کی طرف اتنی سرعت اورتیزی سے توجہ نہ ہونے کی وجہ سے دوماہ بعدحضرت اقدسؑ نے ایک اوراشتہاردیا۔جس میں منارۃ المسیح کی اہمیت اور اس میں چندہ دینے کی فضیلت اور جلدی کی طرف توجہ دلائی گئی ۔اور حضورؑ نے ایک سو ایک ان مخلص احباب کے نام بھی شائع فرمائے کہ جن کی بابت آپ ؑ کوحسن ظن اور یقین تھا کہ وہ اس مالی تحریک میں ضرورحصہ لیں گے ۔اورکم سے کم ایک سوروپیہ چندہ اداکریں گے ۔ ذیل میں وہ اشتہار اور ان خوش نصیب احباب واصحاب کے نام دئے جاتے ہیں کہ جن کے اخلاص ووفا پرخداکے اس رسول کونیک ظن تھا۔

’’ اپنی جماعت کے خاص گروہ کے لئے منارۃ المسیح کے بارے میں توجّہ دہانی اور اس کام کے لئے ان سے ایک درخواست

’’ منارۃ المسیح کے بارے میں اس سے پہلے ایک اشتہار شائع ہو چکا ہے – لیکن جس کمزوری اور کم توجہی کے ساتھ اس کام کے لئے چندہ وصول ہو رہا ہے اس سے ہرگز یہ امید نہیں کہ یہ کام انجام پذیر ہو سکے۔ لہٰذا میں آج خاص طور سے اپنے اُن مخلصوں کو اس کام کے لئے توجہ دلاتا ہوں جن کی نسبت مجھے یقین ہے کہ اگر وہ سچے دل سے کوشش کریں اور جیسا کہ اپنے نفس کے اغراض کے لئے اور اپنے بیٹوں کی شادیوں کے لئے پورے زور سے انتظام سرمایہ کر لیتے ہیں۔ ایسا ہی انتظام کریں تو ممکن ہے کہ یہ کام ہو جائے اگر انسان کو ایمانی دولت سے حصّہ ہو تو گو کیسے ہی مالی مشکلات کے شکنجہ میں آجائے تا ہم وہ کار خیر کی توفیق پا لیتا ہے۔ نظیر کے طور پر بیان کرتا ہوں کہ ان دنوں میں میری جماعت میں سے دو ایسے مخلص آدمیوں نے اس کام کے لئے چندہ دیا ہے جو باقی دوستوں کے لئے درحقیقت جائے رشک ہیں۔ایک ان میں سے منشی عبد العزیز نام ضلع گورداسپور میں پٹواری ہیں جنہوں نے باوجود اپنی کم سرمائیگی کے ایک سو روپیہ اس کام کے لئے چندہ دیا ہے۔ اور میں خیال کرتا ہوں کہ یہ سو روپیہ کئی سال کا ان کا اندوختہ ہو گا۔ اور زیادہ وہ قابلِ تعریف اس کے بھی ہیں کہ ابھی وہ ایک اور کام میں سو روپیہ چندہ دے چکے ہیں۔ اور اب اپنے عیال کی بھی چنداں پروا نہ رکھ کر یہ چندہ پیش کر دیا۔ جزا ہم اللہ خیرالجزاء۔

دوسرے مخلص جنہوں نے اس وقت بڑی مردانگی دکھلائی ہے میاں شادیخاں لکڑی فروش ساکن سیالکوٹ ہیں۔ ابھی وہ ایک کام میں ڈیڑھ سو روپیہ چندہ دے چکے ہیں۔ اور اب اس کام کے لئے دو سو روپیہ چندہ بھیج دیا ہے۔اور یہ وہ متوکل شخص ہے کہ اگر اس کے گھر کاتمام اسباب دیکھا جائےتو شاید تمام جائداد پچاس روپیہ سے زیادہ نہ ہو۔ انہوں نے اپنے خط میں لکھا ہے کہ ’’ چونکہ ایام قحط ہیں اور دنیوی تجارت میں صاف تباہی نظر آتی ہے تو بہتر ہے کہ ہم دینی تجارت کر لیں۔ اس لئے جو کچھ اپنے پاس تھا۔ سب بھیج دیا۔ اور درحقیقت وہ کام کیا جو حضرت ابو بکر رضی اللہ عنہ نے کیا تھا۔ شاید ہمارے بعض مخلصوں کو معلوم نہیں ہو گا کہ یہ منارة المسیح کیا چیز ہے اور اس کی کیا ضرورت ہے۔ سو واضح ہو کہ ہمارے سیّد و مولیٰ خیرالاصفیاء خاتم الانبیاء سیّدنا محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ وسلم کی یہ پیشگوئی ہے کہ مسیح موعود جوخدا کی طرف سے اسلام کے ضعف اور عیسائیت کے غلبہ کے وقت میں نازل ہو گا اس کا نزول ایک سفید منارہ کے قریب ہو گا جو دمشق سے شرقی طرف واقع ہے۔اس پیشگوئی کے پورا کرنے کے لئے دو مرتبہ اسلام میں کوشش کی گئی ہے۔اوّل 741ھ سے پہلے دمشق کے شرقی طرف سنگِ مرمر کےپتھر سے ایک منارہ بنایا گیا تھا جو دمشق سے شرقی طرف اور جامع اموی کی ایک جز تھی اورکہتے ہیں کہ کئی لاکھ روپیہ اس پرخرچ آیا تھا اور بنانے والوں کی غرض یہ تھی کہ تا وہ پیشگوئی رسول اللہ صلے اللہ علیہ وسلم کی پوری ہو جائے۔ لیکن بعد اس کے نصاریٰ نے اس منارہ کو جلادیا۔پھر اس حادثہ کے بعد 741ھ میں دوبارہ کوشش کی گئی کہ وہ منارہ دمشق کی شرقی طرف پھر طیار کیاجائے۔چنانچہ اس منارہ کے لئے بھی غالباً ایک لاکھ روپیہ تک چندہ جمع کیا گیا۔ مگر خدا تعالیٰ کی قضاء و قدر سے جامع اموی کو آگ لگ گئی۔اور وہ منارہ بھی جل گیا۔ غرض دونوں مرتبہ مسلمانوں کو اس قصد میں ناکامی رہی اور اس کا سبب یہی تھا کہ خدا تعالیٰ کا ارادہ تھا کہ قادیان میں منارہ بنے کیونکہ مسیح موعود کے نزول کی یہی جگہ ہے۔سو اب یہ تیسری مرتبہ ہے اور خداتعالیٰ نے آپ لوگوں کو موقع دیا ہے کہ اس ثواب کو حاصل کریں۔ جو شخص اس ثواب کو حاصل کرے گا وہ خدا تعالیٰ کے نزدیک ہمارے انصار میں سےہو گا۔ مَیں دیکھتا ہوں کہ اگرچہ لاکھوں انسان اس جماعت میں داخل ہو جائیں گے اور ہو رہے ہیں مگر مقبول دو گروہ ہی ہیں۔

(1)اول وہ گروہ جنہوں نے بعد اس کے جو مجھے پہچان لیا جو میں خدا کی طرف سے ہوں بہت سے نقصان اُٹھا کر اپنے وطنوں سے ہجرت کی اور قادیان میں اپنے گھربنالئے اور اس درد کی برداشت کی جو ترک وطن اور ترکِ احبابِ وطن میں ہوا کرتی ہے۔ یہ گروہ مہاجرین ہے۔ اور مَیں جانتا ہوں کہ خدا تعالیٰ کے نزدیک ان کا بڑا قدر ہے۔ کیونکہ خدا کے واسطے اپنے وطنوں کو چھوڑنا اور اپنے چلتے ہوئے کاموں کو خاک میں ملا دینا اور اپنے وطن کی پیاری مٹی کو خدا کے لئے الوداع کہہ دینا کچھ تھوڑی بات نہیں۔فطوبٰی للغرباء المھاجرین۔دوسرا گروہ انصار ہے۔ اور وہ اگرچہ اپنے وطنوں میں ہیں۔ لیکن ہر ایک حرکت اور سکون میں ان کے دل ہمارے ساتھ ہیں اوروہ مال سے محض خدا کو راضی کرنے کے لئے مدد دیتے ہیں اور مَیں ارادہ کرتا ہوں اگر خدا تعالیٰ کا بھی ارادہ ہو کہ اس منارہ کے کسی مناسب پہلو میں ان مہاجرین کے نام لکھوں- جنہوں نے محض خدا کے لئے یہ دُکھ اپنے اُوپراٹھا لیا کہ اپنے پیارے وطنوں کو چھوڑ کر ایک خدا کے مامور کا قرب مکانی حاصل کرنے کے لئے قادیان میں سکونت اختیار کر لی اور ایسا ہی ان انصار کے نام بھی جنہوں نے اپنی خدمت اور نصرت کو انتہا تک پہنچایا اور میرا نور قلب مجھے اس وقت اس بات کی طرف تحریک کرتا ہے جو ایسے مبارک کام کے لئے جس میں آنحضرت صلے اللہ علیہ وسلم کی ایک پیشگوئی پوری ہوتی ہے اپنی مخلص جماعت کو اس مالی مدد کی تکلیف دوں جو مومن کے لئے جنت کو واجب کرتا ہے۔ پس مَیں اسی غرض سے چند مخلصین کے نام ذیل میں لکھتا ہوں اور امید رکھتا ہوں کہ ہر ایک ان میں سے کم سے کم ایک سو روپیہ اس عظیم الشّان کام کے لئے پیش کرے۔ اور مَیں خوب جانتا ہوں کہ اگر انسان بیہودہ عذرات کی طرف مائل نہ ہو۔اس قدر رقم ان لوگوں کے لئے کچھ مشکل نہیں جو چالیس یا پچاس یا اس سے زیادہ آمدنی رکھتے ہیں۔ مثلاً عورتوں کا زیور ہی ایک ایسی چیز ہے کہ اگر صدق دل ہو تو اس میں سےکچھ ایسے کام کے لئے آ سکتا ہے۔ بلکہ دیکھا گیاہے کہ جب نیک بخت عورتیں اپنے دیندار خاوندوں اور باپوں اور بھائیوں کے مُنہ سے ایسی باتیں سنتی ہیں تو خود ان کا ایمانی جوش حرکت کرنے لگتا ہے۔اور بسا اوقات اپنے خاوندوں کے حوصلہ سے زیادہ ایک رقم کثیر پیش کر دیتی ہیں۔بلکہ بعض عورتیں بعض مردوں سے صد ہا درجے اچھی ہوتی اور موت کو یاد رکھتی ہیں۔وہ خوب جانتی ہیں کہ جبکہ کبھی کبھی اس زیور کو چور لے جاتے ہیں یا کسی اور طریق سے تباہ ہو جاتا ہے۔ تو پھر اس سے بہتر کیا ہے کہ اس خدا کے لئے جس کی طرف عنقریب کوچ کرنا ہے۔کوئی حصہ زیور کا خرچ کیا جائے۔آخر یہ کام اسی جماعت نے کرنا ہے۔اور دوسرے لوگ اس میں شریک نہیں ہو سکتے وہ تو اَور خیالات میں مبتلاء ہیں۔

(باقی آئندہ)

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

For security, use of Google's reCAPTCHA service is required which is subject to the Google Privacy Policy and Terms of Use.

I agree to these terms.

Back to top button
Close