متفرق شعراء

اپنی چوکھٹ پہ بیٹھ جانے دے

اپنی چوکھٹ پہ بیٹھ جانے دے

پھر کسی سے نہ دل لگانے دے

رحم فرما کے یا کرم کر کے

دینے والے کسی بہانے دے

میرے مولا کسی کو دنیا میں

دل نہ مجبور کا دُکھانے دے

نارِ عدواں کو کر دے برد و سلام

کوئی خرمن نہ اب جلانے دے

ٹکڑے کردے ستم شعاروں کے

بے مہاروں کو قید خانے دے

کرچیاں ہو نہ جائیں سینے کی

کوئی آنسو مجھے بہانے دے

کیا عجب ہے کہ وہ چلا آئے

مجھ کو اک بار تو بلانے دے

تھام کر ہاتھ پاس بٹھلا لے

جاؤں بھی تو مجھے نہ جانے دے

(محمد طاہر ندیم)

مزید دیکھیں

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

For security, use of Google's reCAPTCHA service is required which is subject to the Google Privacy Policy and Terms of Use.

I agree to these terms.

Back to top button
Close