متفرق شعراء

جلسہ سالانہ قادیان کی یاد میں

(منصورہ فضل من)

کہا تھا ناں بڑا ہی ہے ستمگر

بِنا جلسوں کے پھر گُزرا دسمبر

کہاں ہے رونقِ بستانِ احمد

چمن میں ہے خزاں سا ایک منظر

نہیں ہے قافلوں کا شور کوئی

نہ کوئی میہماں خالی پڑا گھر

نہ آلو گوشت کی سوندھی سی خوشبو

نہ ہیں وہ روٹیاں، دیگیں، وہ لنگر

خُدایا خیر کی خبریں سنا دے

نیا ہو سال تو کوئی نہ ہو ڈر

بہائیں اشک یوں آنکھوں سے آؤ

کہ پہنچے ہر صدا عرش بریں پر

الٰہی تیرے کُن کی منتظر ہے

دبی ہے آہ جو اس منؔ کے اندر

(منصورہ فضل منؔ)

مزید دیکھیں

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

For security, use of Google's reCAPTCHA service is required which is subject to the Google Privacy Policy and Terms of Use.

I agree to these terms.

Back to top button
Close