متفرق شعراء

شانِ خاتم النبیینؐ

طویل رستہ، قلیل لقمے، خلیل کوشاں سبیلِ رب میں

وہ ذوقِ گریہ تھا تجھ پہ طاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

وہ نوجوانی کی بیقراری برائے وصلِ وجودِ خالق

ہجومِ دنیا سے پردہ داری درود تجھ پر سلام تجھ پر

حیاء سے عاری معاشرے میں گِھری پڑی تیری زندگانی

خدا نے تیری نظر اتاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

حِرا کے سجدوں میں آنسوؤں پر پیامِ ’’اقراء‘‘ کا گُونج جانا

وہ جس نے کر ڈالا لرزہ طاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

ندائے دعوت لگائی تُو نے تو تیرے درپے ہوئے قبائل

کمال تھی تجھ میں بُردباری درود تجھ پر سلام تجھ پر

جہالتوں کے مقابلے پر محبتوں کا لیا سہارا

کمال درجہ تھی خاکساری درود تجھ پر سلام تجھ پر

کسی کا مقصود مال و دولت کسی کو چاہت ملوکیت کی

تیری تمنا رضائے باری درود تجھ پر سلام تجھ پر

خدا نما تیری ذات ٹھہری، وجود تیرا جمالِ قدرت

وجہ فقط تیری آہ و زاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

صحابہ کی زندگی کا نقشہ تری توجہ نے ایسا بدلہ

ہوئی قبول اُن کی جاں نثاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

زوال جس کو نہیں کبھی بھی کچھ ایسا رتبہ نصیب تیرا

فلک رسا تیری شَہسواری درود تجھ پر سلام تجھ پر

مقام طٰهٰ سے تو مزیّن مقام یٰسٓ تیرا گوہر

جہاں میں رحمت ہے تجھ سے جاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

عبادتوں میں دوام تیرا تھا قَابَ قَوْسَیْن کا نظارہ

ہاں منفرد تھی یہ شب گزاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

غلامؑ تیرا وہ جس کے طرزِ عمل کی تصویر تیری سنت

اسی سبب اُس کی نامداری درود تجھ پر سلام تجھ پر

قلم کی طاقت سے دیں کو سطوت دلائی جس نے تو اُس کا آقا

اسے تری ہر ادا تھی پیاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

لبوں پہ ہر دم درود جاری رہے غضنفر تو ہے محبت

نبی کا احساں ہے ہم پہ بھاری درود تجھ پر سلام تجھ پر

(حافظ اسد اللہ وحید۔ سیرالیون)

مزید دیکھیں

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close