سیرت حضرت مسیح موعود علیہ السلام

احمد علیہ السلام۔ سیرت و سوانح

(سید مبشر احمد ایاز)

باغ میں ملّت کے ہے کوئی گلِ رعنا کھلا

حضرت مسیح موعودؑ کے آبا واجداد

حضرت اقدس مسیح موعودعلیہ الصلوٰة والسلام کے دیگرجدّی رشتہ دار

مرزا نظام الدین صاحب

مرزاغلام محی الدین صاحب کے بیٹے اور حضرت اقدس علیہ السلام کے چچا زادتھے۔مرزاغلام قادرصاحب کی وفات کے بعد صاحبزادہ مرزا سلطان احمدصاحب سرکاری کاغذات میں قادیان کے نمبردارتھے البتہ نمبرداری کاکام بجائے ان کے مرزا نظام الدین صاحب ہی کرتے تھے۔

(بحوالہ کتاب تذکرہ رؤسائےپنجاب جلد دوم صفحہ69،68، سیرت المہدی جلد اوّل روایت نمبر134)

حضرت اقدس مسیح موعودعلیہ الصلوٰة والسلام کے رشتہ داروں میںسے شدیدترین معاندین میں سے ان کا بھی شمارہوتاتھا۔ ان مخالفین کا ایک پوراگروہ تھا جن کی سربراہی مرزاامام الدین صاحب اور مرزانظام الدین صاحب کرتے تھے۔کون سا موقع ہوگا مخالفت کرنے کا جوانہوں نے نہیں چھوڑاہوگا اور آفرین ہے اس رحمۃ للعالمینﷺ کےکامل پیرو اور عاشق صادق پر کہ کون سا موقع ہوگا ان سے حسن ِ سلوک کا کہ جوآپ ؑ نے ان سے نہیں کیاہوگا۔کہیں سفارش کی ضرورت ہے تو سفارشی خط لکھے جارہے ہیں،مدد کی ضرورت ہے تو وہ بھی ہورہی ہے اور سخت بیماری نے آلیا ہے تو دواداروبھی حضرت اقدسؑ فرمارہے ہیں۔ یہاں ان لوگوں کی مخالفت کے تفصیلی ذکر کا موقع نہیں ہے کہ کس کس طور سے یہ حضرت اقدسؑ او رآپؑ کے ساتھیوں کو تکلیفیں دیا کرتے تھے۔احمدیوں سے گالی گلوچ اور مارپیٹ تو عام کرلیتے تھے۔ لیکن احمدیوں کی طرف سے صبرکے انتہائی اعلیٰ نمونے کا مظاہرہ کیاجاتا۔اور حضرت اقدس علیہ السلام کا اپنا یہ عالم تھا کہ جب بھی کوئی ضرورت ان لوگوں کو آن پڑتی یا تکلیف کے وقت وہ مددکے طالب ہوتے تو آپؑ لمحہ بھر کا توقف نہ فرماتے۔صرف ایک واقعہ کا بیان کرناچاہوں گا۔حضرت امّ المومنین ؓکی روایت ہے کہ’’ایک دفعہ مرزا نظام الدین صاحب کو سخت بخار ہوا۔ جس کا دماغ پر بھی اثر تھا۔ اس وقت کوئی اور طبیب یہاں نہیں تھا۔ مرزا نظام الدین صاحب کے عزیزوں نے حضرت صاحب کو اطلاع دی۔ آپ فوراً وہاں تشریف لے گئے اور مناسب علاج کیا۔ علاج یہ تھا کہ آپ نے مُرغا ذبح کراکے سر پر باندھا۔ جس سے فائدہ ہو گیا۔ اس وقت باہمی سخت مخالفت تھی۔‘‘

(سیرت المہدی جلد اوّل روایت نمبر511)

کیاہماری مصیبت کا کوئی علاج نہیں؟

مخالفت کا یہ دور بیس تیس سال تک جاری رہا۔ مرزا امام الدین صاحب کے مرنے کے بعد ان لوگوں کی آنکھیں کھلیں کہ اس ’’آہِ میرزا‘‘ کے سبب سے کون کون سی بلاؤں پر بلائیں ان پر نازل ہوچکی ہیں اور ان کے گھروں میں ویرانیوں کے منحوس سائے ڈیراڈال چکے اور ان کے گھر بیواؤں سے بھرگئے ہیں اور ان کی ساری طاقتیں خاک میں مل گئیں۔ان مخالفین کے گھروں میں اترنے والے نحوست کے سائے اب ان کے دل ودماغ کو مختل کررہے تھے۔ تب انہیں خیال آیالیکن اب وقت ہاتھ سے نکل چکاتھا۔ اب ان لوگوں کویقین ہوا لیکن وہ سب لوگ تو اس دنیاسے بے خانماں اور بے نیل ومرام رخصت ہوچکے تھے۔اس ڈراؤنے اور منحوس گھرانے میں سے صرف مرزا نظام الدین صاحب ہی قابل ذکرتھے اور اب ان کو یقین ہوچکاتھا کہ کس کی خاطر سے یہ سب وبال اور عذاب ان کے گھروں پر ٹوٹے ہیں۔ لیکن افسوس کہ اب وہ ہستی ان کی آنکھوں کے سامنے نہیں تھی کہ اس کے دَرپر کھڑے ہوکر معافی مانگتے کہ خدا ان کے گھروں کی ویرانیوں کو آبادیوں میں اور ان کی بلاؤں کو رحمتوں میں بدل دیتا۔’’وہ میرزا‘‘ اب اس دنیا میں نہیں رہا تھا کہ جس کی ’’آہ‘‘ ان کے جگرگوشوں کوکھائے جارہی تھی۔وہ جس کے الفاظ تقدیروں کا روپ دھار لیاکرتے تھے۔ وہ جس کے غضب کی ایک سانس زندگیوں کوبھسم کردینے کے لیے کافی تھی۔ وہ اپنے رب کے حضور اعلیٰ وارفع مقام پر حاضر ہوچکا تھا۔ آخر کار گھبراکر چاروناچاریہی مرزا نظام الدین اس میرزا کے غلام اور جانشین، حکیم مولوی نورالدین خلیفۃ المسیح الاولؓ کی خدمت میں حاضر ہوااور اس کے دروازے کی چوکھٹ پر سر رکھ کر زارزاررونے لگا۔روتے روتے اس کی ہچکی بندھ گئی۔حضرت مولوی نورالدین صاحب نے رونے کا سبب پوچھا تو روتے روتے کہنے لگا۔

مولوی صاحب! کیاہماری اس مصیبت کا کوئی علاج نہیں ؟میں نے تو اب کوئی مخالفت نہیں کی۔مولوی صاحب کچھ دیرخاموش رہے اور پھر فرمایا مرزا نظام الدین صاحب ! میں خدائی تقدیر کو کس طرح بدل سکتاہوں۔

(یہ مذکورہ بالا واقعہ 1910ء کے لگ بھگ کا ہے اور سیرت المہدی کی روایت نمبر 720سے ماخوذ ہے)

مرزاگل محمدصاحب

وہ شریف ترین انسان تھا جس نے کبھی کسی کی دل آزاری نہیں کی

بہرحال یہ ساراخاندان جو مخالف تھا وہ سارے کا سارا تباہ وبرباد ہوگیا البتہ کچھ ایسے نصیبے والے ثابت ہوئے کہ احمدیت کی آغوش ِ رحمت میں آگئے۔مرزا نظام الدین صاحب کی شاید آخری وقت کی یہ ندامت اور پچھتاوا تھا کہ ان کے بیٹےمرزا گل محمدصاحب نے احمدیت قبول کرلی اور خداکے بدلے اور جزا کا بھی عجب نظام ہے کہ یہی گل محمدصاحب 1923ء کی مجلس مشاورت میں خلیفة المسیح کے پہرے داروں کے نگران نظر آتے ہیں۔چنانچہ ’’رپورٹ مجلس مشاورت‘‘ میں لکھا ہے کہ

(مجلس مشاورت کے موقع پر) ہال کے باہر اور دروازوں پر پہرہ لگایا گیا تھاجو جناب مرزا گل محمدصاحب سیکنڈ لیفٹیننٹ کی زیرنگرانی تھا۔ مرزاصاحب مرزانظام الدین صاحب کے صاحبزادے ہیں۔

[ مأخوذ ازرپورٹ مجلس مشاورت منعقدہ 31مارچ و یکم اپریل1923ء دیباچہ]

مرزاگل محمدصاحب نے 27؍مئی 1917ء کوحضرت خلیفۃ المسیح الثانی ؓ کے دست مبارک پربیعت کرکے احمدیت قبول کی۔1922ء میں گورنمنٹ نے احمدیہ ٹریٹوریل فورس قائم کی جس کے کپتان حضرت صاحبزادہ مرزاشریف احمدصاحب ؓ تھے۔اس میں مرزاگل محمدصاحب سیکنڈلیفٹیننٹ بھرتی ہوئے۔قادیان کی میونسپل کمیٹی کے وائس چیئرمین بھی رہے۔

جب جلسہ مصلح موعودؓ دہلی کے موقع پرشریروں نے جلسہ گاہ پرحملہ کیاتومرزاگل محمدصاحب بھی زخمی ہوئے۔مرہم پٹی کرارہے تھے توقاضی ظہورالدین اکمل صاحب نے پوچھا مرزایہ کیا؟کہنے لگے یہ سب دہلی میں ہوا۔میں نے محض بہ نیت ثواب وکفارہ گناہ خاموشی سے مارکھالی اوریہ دوتین زخم آئے۔ ورنہ میں اورمیرےساتھی بہت کچھ کرسکتے تھے۔

اسی موقع پرجب حضرت خلیفۃ المسیح کی حفاظت کے لیے پہرہ دارجمع ہوئے توان میں مختصرسی تقریرکی اورکہا کہ میں توایک ناچیزوگنہگارہستی ہوں مگروہ نہایت پاک وجودہے جس کے لیے ہماری جان تک بھی قربان ہوجائے توسمجھیں گے کہ فلاح دارین پائی اوریہ کہتے ہوئے آبدیدہ ہوگئے۔

[مأخوذ از الفضل 4اکتوبر1945ء ص6، مأخوذ از مضامین شاکر ص 34]

مرزانظام الدین صاحب کی پہلی بیوی فضل النساء سے کوئی اولادنہیں ہوئی تھی۔ ان کی دوسری بیوی وزیربیگم سے مرزادل محمد،مرزاگل محمدصاحب اور حمیدہ بیگم پیداہوئیں۔مرزاگل محمدصاحب کی پہلی شادی حضرت مصلح موعودؓ کی ہمشیرہ نسبتی محترمہ سیدہ عزیزہ بیگم صاحبہ سے ہوئی۔ ان سے کوئی اولادنہ ہوئی۔ ان کی دوسری شادی مرزااکرم بیگ صاحب پٹی کی بیٹی محترمہ فیروزہ بیگم صاحبہ سے ہوئی۔اوران کے بطن سے مرزانفیس احمدصاحب،مرزالطیف احمدصاحب،شاہدہ بیگم صاحبہ اور مرزا رفیق احمدصاحب پیداہوئے۔ جب ان کاپہلابیٹا پیداہواتومرزاگل محمدصاحب نے بڑی خوشی منائی۔ کہاکرتے تھے کہ ہمارے خاندان پرتوBanلگاہواتھا۔اللہ تعالیٰ نے میری عاجزی قبول فرمالی ہے اور Banتوڑدیاہے۔

وفات سے دوسال قبل انہیں تحریک کی گئی کہ مسجدمبارک قادیان کی دوسری توسیع کے لیے اگروہ اپنے دیوان خانہ کاگیٹ اورچنددکانیں دے دیں تو بہت بہتر ہوگا۔فوراًرضامندہوگئے۔جب بڑاگیٹ مسمارکیاجانے لگا تو طبیعت غمناک ہوگئی اور بڑی حسرت سے کہنے لگے کہ آہ دروازہ میرے آباء کی نشانی تھا اب گرادیاجائےگا۔لیکن خداکاشکرہے کہ میں نے بخوشی یہ کام کرلیا۔ شاید میرا مولااسی طرح میری عاقبت بالخیرکردے اور پھرآبدیدہ ہوکرایک طرف کوچلے گئے۔(مأخوذ از مضامین شاکر ص35)

قارئین کی معلومات کے لیے عرض ہے کہ قادیان میں حضرت اقدسؑ کے آباؤاجداد کے مکانات بہت عالیشان تھے۔ اوربعدمیں جب بھائیوں میں یہ جائدادتقسیم ہوئی تومرزانظام الدین صاحبان کے حصہ میں زیادہ عالیشان مکانات آئے۔اس کاذکرکرتے ہوئے ایک موقع پرحضرت مصلح موعودؓ نے بیان فرمایا:

’’گوریاست کے وارث ہمارے دادا قرارپائے تھے اور ان کوریاست کے وارث ہونے کی وجہ سے گورنمنٹ نے زائدحصہ دیاتھا لیکن مکانات کے لحاظ سے وہ مکانات بہت شاندارتھے جومرزانظام الدین صاحب کے حصہ میں آئے جوہمارے داداکے چھوٹے بھائی کی اولاد تھے۔ان کے مکان میں بڑے بڑے ہال تھے جیسے کہ دلی کے شاہی زمانہ کے مکانات ہوتے ہیں۔‘‘

(رؤیاوکشوف سیدنامحمود(1898ء تا 1960ء) ص 553،رؤیانمبر591۔(12/13ستمبر1954ء)

مکانات کے اسی حصہ کے دیوان خانہ کے ساتھ ایک عالیشان گیٹ تھا۔جس کا ذکر اوپر ہوا ہے۔

مرزاگل محمدصاحب نے 24؍ستمبر1945ء میں پچاس سال کی عمرمیں وفات پائی اور قادیان کے عام قبرستان میں دفن ہوئے۔

مرزاگل محمدصاحب کی وفات پرسلسلہ احمدیہ کی ایک بزرگ شخصیت حضرت ڈاکٹر میر محمد اسماعیل صاحب ؓ نے فرمایا:

’’یہ وہ شریف ترین انسان تھا جس نے کبھی کسی کی دل آزاری نہ کی۔‘‘

(الفضل 25ستمبر1945ء ص 1 جلد 33نمبر 224)

فانیوں کی جاہ و حشمت پر بلا آوے ہزار

سلطنت تیری ہے جو رہتی ہے دائم برقرار

عزت و ذلّت یہ تیرے حکم پر موقوف ہیں

تیرے فرماں سے خزاں آتی ہے اور بادِ بہار

میرے جیسے کو جہاں میں تو نے روشن کر دیا

کون جانے اے مرے مالک ترے بھیدوں کی سار

(باقی آئندہ)

مزید دیکھیں

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close