ایشیا (رپورٹس)

مجلس انصار اللہ بنگلہ دیش کا 42واں سالانہ نیشنل اجتماع اور مجلس شوریٰ

(نوید احمد لیمون۔ نمائندہ الفضل انٹرنیشنل بنگلہ دیش)

اللہ تعالیٰ کے فضل سے امسال مجلس انصار اللہ بنگلہ دیش کا 42واں سالانہ نیشنل اجتماع مورخہ 16، 17 اور 18؍دسمبر 2021ء بنگلہ دیش کے مرکز ڈھاکہ میں منعقد ہوا۔ علمی و ورزشی مقابلہ جات پر مشتمل اس تین روزہ پروگرام کے لیے ملک کے طول و عرض سے آئے ہوئے انصار نے استفادہ کیا۔ امسال اجتماع کا عنوان’’الخیر کلہ فی القرآن‘‘ رکھا گیا تھا۔ اجتماع کے لیے وفود کی آمد کا سلسلہ 15 دسمبر بروز بدھ سے شروع ہو گیا تھا۔

اجتماع کے پہلے روز مورخہ 16؍دسمبر کو دن کا آغاز باجماعت نماز تہجد اور نماز فجر کی ادائیگی سے ہوا۔ صبح ساڑھے دس بجے اجتماع کی افتتاحی تقریب منعقد ہوئی جس کے آغاز میں مکرم صدر صاحب مجلس انصار اللہ بنگلہ دیش جناب الحاج احمد تبشیر چوہدری صاحب نے لوائے انصار اللہ جبکہ نیشنل امیر جناب الحاج مولانا عبد الاوّل خان صاحب چوہدری نے بنگلہ دیش کا جھنڈا لہرایا۔ اس کے بعد افتتاحی تقریب منعقد ہوئی۔ تلاوت قرآن، قومی ترانہ، نظم اور عہد دہرانے کے بعد مکرم چیئرمین اجتماع کمیٹی جناب نصیر الدین صاحب ملت نے حاضرین کو خوش آمدید کہا اور تمام انصار کو اجتماع کے جملہ پروگرامز سے بھرپور استفادہ کرنے اور نظم و ضبط کا مظاہرہ کرنے کی تلقین کی۔ بعد ازاں مکرم امیر صاحب نے اپنی تقریر میں انصار اللہ کو ان کی ذمہ داریوں کی طرف توجہ دلائی ۔ اس کے بعد مولانا شاہ محمد نور الامین صاحب نے ’’حب الوطن من الایمان‘‘ کے موضوع پر تقریر کی۔ بعد ازاں مکرم صدر مجلس انصار اللہ بنگلہ دیش نے سب شاملین کو خوش آمدید کہا اور تمام انصار کو اجتماع کے جملہ پروگرامز سے بھرپور استفادہ کرنے کی تلقین کی۔ بنگلہ دیش میں یوم آزادی کی 50ویں سال گرہ منائی جارہی ہے، صدر صاحب نے اس موقع پر سب کو یوم آزادی کی مبارک باد دی۔ اسی طرح آپ نے باجماعت نماز، تہجد، صفائی، انصار اللہ کی ذمہ داری اور دین کو دنیا پر مقدم رکھنے کی طرف توجہ دلائی۔ آخر پر محترم نیشنل امیر صاحب نےدعا کرائی۔

نماز ظہر اور عصرکی ادائیگی کے بعد ورزشی و علمی مقابلہ جات شروع ہوئے جو اجتماع کے دوسرے دن تک جاری رہے۔ نماز مغرب اور عشاء کے بعد اجلاس عام اور تربیتی اجلاس منعقد ہوا۔ اس اجلاس میں مکرم مولانا عطا المجیب راشد صاحب امام مسجد فضل لندن نے ورچوئل شرکت کی۔ آپ نے ’’الخیر کلہ فی القرآن‘‘ کے موضوع پر بہت ہی پُر اثر تقریر کی۔ آپ نے قرآن مجید کی عظمت، برکات، روزانہ قرآن پڑھنے کی اہمیت و فضیلت کو قرآن کریم، حدیث، اور حضرت مسیح موعود علیہ السلام اور خلفائے احمدیت کے ارشادات کی روشنی میں بیان کیا۔

اجتماع کے دوسرے دن بروز جمعہ،دن کا آغاز نماز تہجد اور نماز فجر کی باجماعت ادائیگی سے ہوا۔ آج بھی علمی اور ورزشی مقابلہ جات منعقد ہوئے جن میں سب انصار نے بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔ شام 7بجے حضور انور ایدہ اللہ تعالیٰ بنصرہ العزیز کا خطبہ جمعہ براہ راست سب نے سنا۔ خطبہ جمعہ کے بعد تعلیمی و علمی مقابلہ جات جاری رہے۔

اجتماع کے تیسرے روز بھی دن کا آغاز نماز تہجد اور نماز فجر کی باجماعت ادائیگی سے ہوا۔ صبح ساڑھےدس بجے اجتماع کی اختتامی تقریب و تقسیم انعامات منعقد ہوئی۔ اس میں تلاوت قرآن اور نظم کے بعد قائد عمومی اور قائد مال نے سالانہ رپورٹ پیش کی۔ اس کے بعد پرنسپل جامعہ احمدیہ بنگلہ دیش مکرم مبشر الرحمان صاحب نے انصار اللہ کی ذمہ داریوں کی طرف توجہ دلائی۔ بعد ازاں مکرم نیشنل امیر صاحب نے تقریر کی۔ اس کے بعد سیکرٹری اجتماع کمیٹی جناب سرور مرشد صاحب نے سب حاضرین کا شکریہ ادا کیا۔بعد ازاں مکرم صدر مجلس انصار اللہ بنگلہ دیش نے اختتامی تقریر کی اور علمی اور ورزشی مقابلہ جات میں نمایاں پوزیشنز حاصل کرنے والے انصار میں انعامات تقسیم کیے۔ اختتامی دعا سے پہلے عہد دہرایا گیا۔ امسال اجتماع میں رجسٹریشن کے مطابق کل771 انصار نے81 مجلس سے شرکت کی۔

یہاں اس بات کا ذکر کرنا بھی ضروری ہے کہ مورخہ 18 اور 19 دسمبر بروز ہفتہ اور اتوار مجلس انصار اللہ بنگلہ دیش کی 43ویں مجلس شوریٰ بھی منعقد ہوئی جس میں صدر مجلس انصار اللہ اور صدر مجلس برائے صف دوئم کا انتخاب بھی ہوا۔ دو روزہ مجلس شوریٰ میں 314 نمائندگان شوریٰ اور 5 زائرین نے شرکت کی۔

اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ مجلس انصار اللہ بنگلہ دیش کو علم و عرفان میں بڑھائے اور اسے صحیح معنوں میں احمدیت کا خادم بنائے۔ آمین

(رپورٹ : نوید احمد لیمن، نمائندہ الفضل انٹرنیشنل)

متعلقہ مضمون

رائے کا اظہار فرمائیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close